Aanchal Apr 15

بیاض دل

میمونہ رومان

ارویٰ مختار… میاں چنوں

منافی اللہ میں بقا کا راز مضمر ہے
جسے مرنا نہیں آتا اسے جینا نہیں آتا

حمیرا نوشین… منڈی بہائو الدین

تشخیص بجا ہے کہ مجھے عشق ہوا ہے
نسخے میں لکھو ان سے ملاقات زیادہ

فریحہ شبیر… شاہ نکڈر

مسلسل غم اٹھانے سے یہی بہتر ہے
کنارہ کرلیا جائے‘ کنارہ کرنے والوں سے

طیبہ سعدیہ عطاریہ… کھٹیالیہ

کٹ گئے درخت مگر تعلق کی بات تھی
بیٹھے رہے زمیں پر پرندے تمام رات

پروین افضل شاہین… بہاولنگر

کبھی کبھی تو اسیروں کی بے گناہی سے
عدالتوں کے کٹہرے بھی کانپ اٹھتے ہیں

شزا بلوچ… جھنگ صدر

بھرے بازار سے اکثر خالی ہاتھ ہی لوٹ آتا ہوں ساگر
پہلے پیسے نہیں تھے اب خواہشیں نہیں رہیں

ارم کمال… فیصل آباد

جذبے کی لُو کو میرے جنوں نے چھوا تو ہے
اتنا ہوا وہ خواب میں آکر ملا تو ہے
وہ دشمنی کے ساتھ سہی دیکھتا تو ہے
ہم مطمئن کہ اس سے کوئی رابطہ تو ہے

رابعہ چوہدری… فیصل آباد

اس دفعہ تو بارشیں رکتی نہیں ہیں دوستو
ہم نے کیا آنسو پئے کہ سارے موسم ہی روپڑے

سباس گل… رحیم یار خان

خاموش تھے تو سب کے منظورِ نظر تھے ہم
بولے تو پھر کسی کو بھی اچھے نہیں لگے

زدف سلیمان… شور کوٹ شہر

لکھنا تو تھا کہ خوش ہوں تیرے بغیر
آنسو مگر قلم سے پہلے ہی گرگئے

حفصہ بتول… بہاولپور

بہت سے لوگ تھے مہمان میرے گھر لیکن
وہ جانتا تھا اہتمام کس کے لیے ہے

نیلم شرافت…جتوئی

سوچ کر میں نے چنی ہے آخری آرام آگاہ
میں تھا مٹی اور مجھے مٹی کا گھر اچھا لگا
منزلوں کی بات چھوڑ و کس نے پائیں منزلیں
اک سفر اچھا لگا اک ہم سفر اچھا لگا

ماروی یاسمین… سرگودھا

موسم خوشبو‘ بادِ صبا‘ چاند‘ شفق اور تاروں میں
کون تمہارے جیسا ہے وقت ملا تو سوچیں گے

رومیہ عباسی… دیول (مری)

ہم پر ختم تھا محبت کا تماشہ گویا
روح کو روز جسم سے جدا کرتے ہیں
زندگی ہم سے تیرے ناز اٹھائے نہ گئے
سانس لینے کی فقط رسم ادا کرتے ہیں

مدیحہ نورین مہک… برنالی

حسن اور اتنی فراوانی کے ساتھ
دیکھتا رہتا ہوں حیرانی کے ساتھ

کوثر خالد… جڑانوالہ

دعوئوں کے ترازو میں تو عظمت نہیں تلتی
فیتے سے تو کردار کو ناپا نہیں جاتا

نورین لطیف… ٹوبہ ٹیک سنگھ

اے وعدہ فراموش تیری خیر ہو لیکن
اک بات میری مان‘ تُو وعدہ نہ کیا کر

ناہید بشیر رانا… رحمان گڑھ

تم سے ملے‘ مل کر بچھڑے‘ بچھڑ کر پھر ملے
ایسی بھی رہیں دوریاں‘ ایسے بھی فاصلے رہے
تو بھی نہ مل سکھا زندگی بھی رائیگاں گئی
تجھ سے تو خیر عشق تھا خود سے بڑے گلے رہے

شگفتہ خان… بھلوال

دیکھ کب مل پائیں گے بارش‘ بادل میں اور تم
دیکھو کب سنگ جی پائیں گے بارش‘ بادل میں اور تم

طیبہ مریم… تونسہ شریف

کبھی پتھر سے ٹکرائے تو آئے نہ خراش
کبھی اک بات سے انسان بکھر جاتے ہیں

علمہٰ شمشاد حسین… کورنگی‘ کراچی

اس کی آنکھوں میں آنسو تھے میری خاطر
بس وہی اک لمحہ مجھے زندگی سے بھی پیارا لگا

کنزیٰ رحمان… فتح جنگ

ادھورا سا محسوس کرتی ہوں میں خود کو
نہ جانے کون چھوڑ گیا ہے مجھے تعمیر کرتے کرتے

نورین مسکان سرور… سیالکوٹ

زندگی کھلاڑی ہے زندگی سے کھیلے ہیں
عارضی کھلونوں کے‘عارضی سے میلے ہیں
سانس سے شروع ہوکر سانس تک چلے ہیں ہم
اور ہجوم میں رہ کر آج تک اکیلے ہیں

نبیلہ ناز… ٹیگھ موڑ

اداس کیوں ہو زمانہ کی بدسلوکی سے
ہمیں تو علم ہے یہ فطرت زمانہ ہے

شمع کوثر‘ عینی کوثر… نامعلوم

جھک گئیں اکثر میری آنکھیں یہ سوچ کر
کیا کیا عنایتیں ہیں میرے ربّ کی مجھ پر

عائشہ حسین… قلعہ دیدار سنگھ

2لہو سے دل‘ دل چہرے اجالنے کے لیے
میں جی رہا ہوں اندھیروں کو ٹالنے کے لیے
وہ ماہتاب صفت‘ آئینہ جبیں محسنؔ
گلے ملا بھی تو مطلب نکالنے کے لیے

ہما ایوب… عارف والا

صرف اس شوق میں پوچھی ہیں ہزاروں باتیں
میں تیرا حسن‘ تیرے حسنِ بیاں تک دیکھوں

فریدہ فری یوسف زئی… لاہور

زندگی تیرا بھی احسان کوئی کیوں رہ جائے
تو بھی لے جا اس خاک سے حصہ اپنا

حرا قریشی… بلال کالونی‘ ملتان

وہ کہکشاں زادو سیل نکہت ہمارے ہمراہ چل پڑا تھا
کہاں تھا ورنہ ہمیں گوارا‘ کبھی سمندر کبھی ستارہ
مرے بھٹکنے پر جانِ محسنؔ یہ طنز کیسا ہے اس جہاں میں
ہوئے ہیں بے سمت و بے کنارا‘ کبھی سمندر کبھی ستارہ

سویرا فیاض اسحاق… مہیانہ

ملیں گی ہم کو اپنے نصیب کی خوشیاں
بس انتظار ہے کب یہ کمال ہونا ہے
ہر ایک شخص چلے گا ہماری راہوں پر
محبتوں میں ہمیں وہ مثال ہونا ہے

سمیرا مشتاق ملک… اسلام آباد

احساس کسی یاد کا تھامے ہوئے آنچل
اس بھیڑ میں مجھ کو کہیں کھونے نہیں دیتا
دیکھے گا کسی اور کے ہمراہ مجھے کیا
وہ شخص تو مجھ کو میرا ہونے نہیں دیتا

سامعہ ملک پرویز… خان پور‘ ہزارہ

محو حیرت ہوں تغیر دل پر اے مہربان
جسے بھلا رکھا تھا مدت سے وہ شخص یاد آنے لگا
اس کے خیال سے نکلنے کی سبھی کوششیں رائیگاں گئیں
اس کی سوچ کا بادل میری ذاتِ بے نشان پر چھانے لگا ہے

رضوانہ کرن… کمالیہ

تسکین دل کے واسطے وعدہ تو کیجیے
ہم جانتے ہیں آپ سے آیا نہ جائے گا

عروسہ شہوار رفیع… گجرات

میری بیاض شعر پر وہ نام لکھ گیا
اک اور خواب اور حسین شام لکھ گیا
دل اس کو ڈھونڈتا ہے اسی کی تلاش ہے
چپکے سے جو اک دعا میرے نام لکھ گیا

تسلیم شہزادی… اسلام پورہ‘ کمالیہ

اعمال سے خالی اس دنیا کو آفات کی دیمک کھاگئی
ہم روز نمازیں چھوڑیں گے تو روزِ قیامت آئے گی

Show More

Check Also

Close
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close