Hijaab Apr 19

بات چیت

مدیرہ

السلام علیکم و رحمتہ اللہ و برکاتہ۔
اپریل 2019ء کا شمارہ آپ کے ذوق مطالعہ کی تسکین کے لیے حاضر ہے۔
محبت اس کائنات کی بنیادی اکائی ہے۔ خشت اول، مختلف النوع مخلوق کے درمیان تعلق کا وسیلہ، اس کائنات پر محیط سب سے طاقت ور جذبہ جو مختلف رنگوں میں مختلف جلوے دکھاتا ہے۔ یہ تو طے ہے کہ رب العالمین نے تمام انسانوں کو یکساں پیدا نہیں کیا۔ بعض لوگوں کو بعض لوگوں پر فضیلت دے رکھی ہے۔ جذبۂ محبت بھی مختلف حیثیتوں کے درمیان گردش کرتا ہوا مختلف رنگ دکھاتا ہے۔
بچہ پیاس سے بے تاب ہوا تو بے قرار ماں کا پہاڑیوں کے درمیان دوڑنا ایسا بھایا کہ سنت قرار پایا۔ باپ کو حکم ملے تو بیٹا ذبح ہونے کو تیار، بھائی ہو تو بے خطر بستر پر سو جاتا ہے اور بندہ ہو تو سجدے میں سر کٹوانے سے دریغ نہیں کرتا۔ یہ سب کیا تھا؟ یہ سب محبت کے مظاہر تھے۔ دنیا میں ہم محبت کے مختلف روپ دیکھتے ہیں۔ بچوں اور والدین کی محبت‘ بہن بھائیوں کی محبت‘ شاگردوں سے استاد کی محبت، دوستوں کے درمیان محبت‘ مرد و عورت کے درمیان محبت، وطن سے محبت‘ غرض محبت کے کئی روپ اور درجے ہوتے ہیں مگر یہ سب ادنیٰ ہیں کیونکہ محبت کرنے والے کم حیثیت ہیں۔
محبت بذات خود اعلیٰ و ادنیٰ نہیں ہوتی بلکہ اس کو برتنے والے کی حیثیت اس کی قیمت کا تعین کرتی ہے۔
محبوب کی حیثیت، محبت کی ذلت و عزت کا فیصلہ کرتی ہے۔ دنیا کی محبت عموماً رسوائی پر منتج ہوتی ہے اور دنیا کے خالق سے محبت سر بلندی کا ذریعہ بنتی ہے۔ جب محبت دل میں گھر بناتی ہے تو محبوب سے وابستہ ہر شے، ہر رشتہ پیارا ہوجاتا ہے اور محبوب کی رضا ہی مقصد حیات ٹھہرتی ہے۔ محبت در حقیقت اپنی مرضی ختم کر دینے کا نام ہے۔ اپنی ذات کو محبوب کے سپرد کردینے کا نام ہے اور محبت میں جب وہ مقام آجائے جہاں ’’میں‘‘ نہ رہے سب ’’تو ہی تو‘‘ ہو تو پھر محب اور محبوب میں فرق کرنا مشکل ہوجاتا ہے۔ یہ وہ مقام ہے جہاں فرماں برداری کے پَر جل جاتے ہیں اور محبت کا مقام شروع ہوجاتا ہے۔ وہ مقام جہاں تمام حجاب اٹھا لیے جاتے ہیں۔ محبت اپنی معراج کی انتہا کو پہنچ جاتی ہے اس کے بعد محبت کے باب میں لکھنے کے لیے کچھ باقی نہیں رہتا۔

انا للہ و انا الیہ راجعون

انتہائی افسوس کے ساتھ اطلاع دی جارہی ہے کہ ہماری بہت پیاری ساتھی و مدیرہ قیصر آرأ آنی کے شریک حیات رضائے الٰہی سے اس دار فانی سے رحلت فرما گئے ہے۔ دعا ہے کہ رب العالمین مرحوم کے درجات بلند فرما کر ان کو اعلیٰ اعلین میں اعلیٰ ترین مقام عطا فرمائے اور تمام اہل خانہ کو صبر جمیل عطا فرمائے۔ ادارۂ قیصر آرأ آنی کے اس دکھ و غم کی گھڑی میں برابر کا شریک ہے۔
قارئین سے بھی مرحوم کے لیے دعائے مغفرت کے ملتمس ہیں۔

r…اس ماہ کے ستارے…r

اُم ایمان قاضی، عائشہ نور محمد، راشدہ رفعت، سویرا فلک، ثمینہ فیاض، نسرین اختر نینا، ریما نور رضوان، اسرأ صغیر احمد۔

Show More

Check Also

Close
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close