Hijaab Sep-16

ذکر اس پری وش کا

زینب احمد

تمام حجاب اسٹاف‘ پڑھنے اور لکھنے والوں کومحبت بھرا سلام‘ مابدولت کو نبیلہ کہتے ہیں 26 جون کی تپتی ہوئی دوپہر کو اس دنیا میں تشریف لائی۔ بہت پیارے کیوٹ سے تین بھائی اور بہت پیاری اور عزیز تین بہنیں ہیں۔ سب سے بڑے عمران بھیا (میری جان) پھر صائقہ باجی (میری استاد) پھر مصباح باجی (ایک پیاری بہن) پھر نومی بھیا (میرا مان) پھر زینی (میری نٹ کھٹ سی بہن) پھر حماد ملک( میرا پیار) اور پھر آخر میںمابدولت۔گھر میں چھوٹی ہونے کے ناطے سب کی لاڈلی ہوں‘ بہت اچھی سیدھی سادھی سی ماں او ورلڈ بیسٹ ڈیڈ۔میں بی ایڈ کی طالبہ ہوں اور خود کو بہت خوش نصیب سمجھتی ہوں کہ مجھے اللہ تعالیٰ نے دنیاکا سب سے اچھا اور پیارا باپ عطا کیا۔ ہم چاروں بہنیں اپنے پاپا کی جان تھیں‘ ہم ان کی شہزادیاں تھیں۔ وہ کبھی بھی ہماری آنکھ میں ایک آنسو تک نہیں آنے دیتے مگر خود ایک ناختم ہونے والا درد دے کر چلے گئے ۔ 8جولائی کو مجھ پر قیامت ٹوٹی تھی اور لگتا ہے کہ سب کچھ جیسے ختم سا ہوگیا ہو‘ زندگی میں اب وہ چارم نہیں رہا۔ ہمارا دوست‘ ہمارا مان‘ ہمارا غرور‘ ہمارا فخر‘ ہمارا پیار‘ ہمارا استاد‘ ہمارے بہت بہت پیارے پاپا تھے۔ صحیح کہتے ہیں زندگی میں کبھی بھی کوئی باپ کی کمی نہیں پوری کرسکتا اور نہ ہی ہم کبھی اپنے بابا کی جگہ کسی اور کو دے سکتے ہیں۔ اللہ انہیں کروٹ کروٹ جنت نصیب فرمائے‘ آمین۔ میری تین عدد بھابیاں بھی ہیں‘ رینائے (عائش) حمیرا (حمیری) مہوش (مہشی) اللہ تعالیٰ ان تینوں کو سکون‘ خوشیاں اور عزت نصیب کرے۔ ریڈ اور بلیک کلر بہت اٹریکٹ کرتے ہیں‘ ریڈ روز کی تودیوانی ہوں۔ پھلوں میں کیلا‘ خوبانی اور آڑوبہت پسند ہے‘ لباس میں فراک اور چوڑی دار پاجامہ پہننے کو ترجیح دیتی ہوں۔ چاول اور چاٹ کی بہت شوقین ہوں اور اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرتی ہوں کہ میری پیدائش سے قبل چائے ایجاد ہوچکی تھی۔ چھوٹے گھر یعنی مٹی کے گھر اور بڑے دل والے لوگ بہت متاثر کرتے ہیں۔ انسان کا پسندیدہ روپ بھائی اور باپ ہے‘ بارش میں بھیگنا اور ہارس رائیڈنگ بہت پسند ہے۔ غصہ بہت جلدی آتا ہے‘ لوگوں کے انداز ان کے دل کا حال بتادیتے ہیں‘ باتوں سے زیادہ مجھے رویے ہرٹ کرتے ہیں‘ شاہد خان آفریدی کی پکچرز اکٹھی کرنا میرا مشغلہ ہے۔ نیند نہ آئے تو میوزک سنتی ہوں‘ پنجابی سونگ بہت اچھے لگتے ہیں۔ پسندیدہ ایکٹر ریتک روشن اور احسن خان ہیں۔ پسندیدہ سیاستدان مشرف اور بارک اوباما ہیں۔ پسندیدہ موسم سردیوں کا ہے‘ میں اپنے پاپا کے جیسی بننا چاہتی ہوں نڈر ‘ بے باک‘ اصول پرست‘ لوگوں کے دکھ سکھ بانٹنے والی۔لمبے چوڑے رشتے پالنا پسند نہیں‘ میرے لیے میری فیملی صرف میرے بہن‘ بھائی اور ماں پاپ ہیں۔ زندگی بہترین استاد ہے اس سے بہت کچھ سیکھا ہے جو چاہ کر بھی بھلا نہیں پائوں گی‘ زندگی میں اگر بُرا وقت نہ آئے تو اپنوں میں چھپے غیر اور غیروں میں چھپے اپنے دونوں ہی چھپے رہتے ہیں۔ فرینڈز سرکل بہت چھوٹا سا ہے مریم‘ حنا‘ اسماء‘ سحرش اور ثمینہ باجی میری فرینڈز میں شامل ہے۔ اپنی پرابلمز ڈائری سے شیئر کرتی ہوں جو کوئی سوال نہیں کرتی۔ کسی سے ناراض ہوجائوں تو پھر جلدی سے راضی نہیں ہوتی۔ اکثر سوچتی ہوں کاش میں لڑکا ہوتی‘ اپنے پاپا کے کافی سارے خوابوں کو تعبیر دے سکتی۔ میرے پسندیدہ نام صائم‘ شاہ ویز اور اشمل ہیں۔ زندگی سے ایک سبق سیکھا ہے ’’قابل اعتبار ہی اکثر قاتل اعتبار ہوتے ہیں‘‘۔ میری جان‘ میرا چاند شارو (شارق رضا) جلدی سے پاکستان آئو نومی ماموں کی شادی کے لیے‘ آئی لو یو شارق۔ زندہ دل اور ہنستے مسکراتے لوگ اچھے لگتے ہیں‘ مجھے لگتا ہے کہ جس نے ہر حال میں خوش رہنے کا فن سیکھ لیا ہے اس نے زندگی کا سب سے بڑا فن سیکھ لیا ہے۔ آخر میں جن لوگوں کے باپ زندہ ہیں ان کے لیے دعا کروں گی کہ اللہ ان کے سر سے کبھی بھی باپ کا سایہ نہ ہٹائے اور انہیں اپنے بچوں کے سروں پر قائم رکھے‘ انہیں کبھی بھی وہ درد نہ ملے جو ہم جھیل رہے ہیں۔ تمام ریڈرز سے گزارش ہے کہ میرے بابا کے لیے سورۃ اخلاص پڑھ کر دعا کریں‘ اجازت چاہوں گی‘ مجھ سے مل کر کیسا لگا ضرور بتایئے گا‘ اللہ حافظ۔

السلام علیکم! ڈئیر ریڈرز‘ سویٹ رائٹرز اینڈ نائس آنچل و حجاب اسٹاف آپ سب کو میرا محبتوں‘ چاہتوں‘ مسکراہٹوں بھرا سلام۔ آپ بھی کہہ رہے ہوں گے کہ یہ کون ہے (تو جناب زیادہ بھولا بننے کی ضرورت نہیں ہے) اوپر آپ میرا نام پڑھ چکے ہیں‘ چلئے ایک بار پھر بتادیتے ہیں مابدولت کو ایم فاطمہ سیال کہتے ہیں‘ 2 فروری کو اس دنیا کو رونق بخشی ‘ ہم چھ بہن بھائی ہیں۔ بڑی سسٹر عظمیٰ پھر رضیہ‘ عدیلہ اور پھر ہم بذات خود اور مجھ سے چھوٹے بھائی مناظر علی اینڈ فراست علی یہ بڑا ہے۔ کھانے میں سب کچھ کھالیتی ہوں جو مل جائے۔ سب سے زیادہ کھانے میں بریانی‘ مرنڈا‘ لذیزہ کھیر‘ شامی کباب اور آئس کریم پسند ہیں۔ لباس میں شلوار ‘ لانگ شرٹ اور بڑا سا دوپٹہ‘ فراک بھی پسند ہے۔ چوڑیاں پہننا اور مہندی لگانا بہت پسند ہے لیکن جب بھی چوڑیاں پہنوں یامہندی لگائوں تو کسی نہ کسی سے لڑائی ہوجاتی ہے‘ اس لیے یہ خواہش حسرت بناکے ہی رکھتی ہوں۔ میرے ابو امی کو میرا سلام (آئی لو یو سومچ)۔ خوبیوں اور خامیاں بھی بتانا ہی پڑیں گی تو جی خامیاں یہ ہیں کہ غصے کی بہت تیز ہوں اور پھر کنٹرول بھی نہیں کرپاتی جس سے نقصان بھی سراسر اپنا ہی کرتی ہوں اور پھر آنسوئوں کے رستے نکالتی ہوں بہت جلد دوسروں پر بھروسہ کرلیتی ہوں اور پھر دھوکہ بھی کھاتی ہوں۔ ایک بارجو بات دل میں بیٹھ جائے وہ پھر نکالے نہیں نکلتی۔ مروت کا نقاب چڑھانا پسند نہیں‘ میرے خیال میں یہ منافقت ہے۔ کسی کے لیے جو میرے دل میں ہو وہ ہی ظاہر بھی ہوتا ہے محبت‘ نفرت‘ پیارو خلوص‘ چاہت ہر معاملے میں بہت شدت پسند ہوں۔ یہ نہیں کہوں گی کہ کسی سے نفرت نہیں کرتی بلکہ جس سے کروں اس کے بارے میں سوچنا چھوڑ دیتی ہوں کہ کہیں منفی سوچوں کی وجہ سے اسے نقصان نہ پہنچادوں اور پھر اگر وہ انسان سامنے بھی بیٹھا ہو تو پروا نہیں۔میرے لیے ایسے ہی ہے جیسے موجود ہی نہ ہو۔ یہ تو ہوگئی خامیاں‘ خوبی صرف ایک ہی ہے کہ جو پیار محبت اور خلوص دے تو اسے اس سے بڑھ کر دیتی ہوں اور کوئی خوبی مجھے نظر نہیں آئی اگر آپ فیل کرو تو بتادینا۔کوکنگ اور گھر کے کام ہر چیز سے فارغ ہوں کہ بڑی سسٹرز کرلیتی ہیں بی اے پرائیوٹ کررہی ہوں۔ اسکول لائف اور ایف اے کالج لائف میں جو بھی ٹیچرز اور فرینڈز ملیں سب بہت نائس تھیں اور یاد بھی ہیں لیکن اب کوئی ساتھ نہیں۔ ارے اپنے گائوں کا نام بتانا تو بھول ہی گئی ضلع حافظ آباد کے ایک گائوں محمود پور میں رہتی ہوں۔ اچھا اور منفرد لکھنے والے سب رائٹرز پسند ہیں‘ شاعری بہت اٹریکٹ کرتی ہے‘ میری اپنی پہلی غزل آنچل مئی 2015ء میں شائع ہوئی تھی۔ پسندیدہ شخصیت حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد قائد اعظم اور علامہ اقبال۔ کرکٹر میں سعید اجمل پسند ہیں مگر وہ اب نہیں کھیلتے۔ سعید صاحب آپ کو کرکٹ اکیڈمی بنانے پر بہت بہت مبارک باد۔ پسندیدہ سنگر راحت فتح علی خان‘ پسندیدہ ناول ’’قراقرم کا تاج محل‘ پہاڑ‘ صحرا دریا‘‘ بہت پسند ہیں۔ اونچے برف پوش پہاڑوں کی وسعتوں میں گم ہوجانے کو دل کرتا ہے اگر اجازت اور گائیڈ نس ملتی تو میں ایک اچھی کوہ پیماں ہوتی (ہاہاہا)۔ جھیل کنارے‘ پہاڑوں کی اوٹ میں ڈوبتے سورج کا جھیل پر پڑتا عکس بہت پسند ہے۔ دسمبر کی دھند میں لپٹی اداس راتیں دل کے بہت قریب محسوس ہوتی ہیں۔ رات بہت پسند ہے‘ خاموشی‘ تنہائی اور اندھیرے کمرے میں بیٹھنا‘ تنہا بیٹھ کے مدھم روشنی میں آنچل و حجاب پڑھنا بہت پسند ہے اور اب جو آنچل میں فرینڈز بنی ہیں ان سب کو بھی میرا ڈھیروں ڈھیر سلام اور باقی پڑھنے والوں کو بھی‘ اللہ آنچل و حجاب کو دن دگنی رات چوگنی ترقی دے اور ہمارے ملک پاکستان کو اپنے حفظ و امان میں رکھے‘ میرا تعارف کیسا لگا ضرور بتایئے ‘ اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو‘ اللہ نگہبان۔

ڈئیر آنچل و حجاب اسٹاف اینڈ قارئین کرام اور تمام اہل پاکستان کو میرا چاہتوں اور محبتوں بھرا سلام قبول ہو۔ مابدولت کا نام ہانیہ اعجاز ہے‘ میرا تعلق آزادکشمیر کے ایک گائوں پنڈی سے ہے۔ میں نے ایف اے کا امتحان دیا ہے( آپ سب سے گزارش ہے کہ میرے لیے دعا کریں کہ میرا رزلٹ اچھا آئے) مزید پڑھنے کا ارادہ ہے‘ باقی جو رب جانے۔ ہم پانچ بہن بھائی ہیں‘ بڑا بھائی دبئی میں ہوتا ہے میری اپنے بھائی کے لیے یہی دعا ہے کہ اللہ تمہیں اتنی دولت دے کہ تمہارا دامن تنگ پڑجائے‘ میں اکیلی بہن ہوں اور گھر والوں کی لاڈلی ہوں۔ اچھا اب میں اپنی خامیوں کا تذکرہ کرتی ہوں کیونکہ خوبیاں سننا سنانا تو سب کو پسند ہوتا ہے مگر خامیوں پر لوگ کم ہی متوجہ ہوتے ہیں۔ میری دوستیں مجھے کہتی ہیںکہ تم بہت ضدی ہو‘ میرا چھوٹا بھائی کہتا ہے کہ واقعی تمہاری دوستیں ٹھیک ہی کہتی ہیں کہ تم ضدی ہو بقول میرے پاپا جانی کہ میں چڑیل ہوں‘ غصہ بہت کم آتا ہے مگر جب آتا ہے تو پھر اچھا خاصا ہوتا ہے۔ مجھے جھوٹ بولنے والے لوگوں سے سخت نفرت ہے۔ میری خوبیاں بہت سی ہیں ان کا تذکرہ کرنا بہت مشکل ہے میں ہی کررہی ہوں(ہاہاہاہا)۔ پاکستان اور پارک آرمی سے عشق ہے ‘ میری بہت سی دوستیں ہیں جن کی وجہ سے زندگی میں رونق ہی رونق ہے۔ میری دوستی بہت اچھی اور خوب صورت ہیں‘ اپنی دوستوں پر فخر ہے۔ دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ میری دوستوں کو صحت و تندرستی اور لمبی زندگی عطا فرمائے۔ میری بیسٹ فرینڈز میں سلمیٰ منیر‘ ربیعہ بشارت‘ انساء ناز‘ مبین عارف‘ مبین امانت‘ خدیجہ طارق ‘ ربیعہ فاروق‘ اقراء رفیق ہیں۔ میں اپنی چڑیل دوستوں کو بہت مس کرتی ہوں‘ میری بیسٹ ٹیچرز میں ٹیچر مبشریٰ‘ فرازانہ کوثر‘ مصباح رفیق‘ شازیہ‘ نائلہ‘ نسیم‘ پروین‘ عابدہ اور ٹیچر فوزیہ ہیں۔ میڈم شاہدہ کو تو میں کبھی بھول نہیں سکتی اللہ تعالیٰ میری تمام ٹیچرز کو صحت و تندرستی عطا فرمائے‘ آمین۔ میری آئیڈیل شخصیت میں حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم‘حضرت فاطمہؓ، حضرت عائشہؓ میری دادی جان اور میری خالہ اور میرے پاپا جانی ہیں۔ میں اپنے پاپا جانی کی طرح بننا چاہتی ہوں۔ فیورٹ رائٹرز میں نازیہ کنول نازی‘ سمیرا شریف طور‘ فاخرہ گل‘ راحت وفا ہیں‘ باقی سب رائٹرز بھی بہت بہت اچھا لکھتی ہیں۔ مجھے سب کی تحریریں بہت پسند ہیں۔ پڑھنے کا بے حد شوق ہے‘ اس وقت تک نیند نہیں آتی جب تک کچھ پڑھ نہ لوں۔ ہر وقت کچھ نہ کچھ پڑھنے کی عادت ہے‘ آنچل و حجاب کا انتظار بڑی بے تابی سے کرتی ہوں‘ آنچل و حجاب کے تمام سلسلے بہت اچھے ہیں خصوصاً افسانے اور مکمل ناول ہیں۔ اللہ تعالیٰ تمام آنچل و حجاب اسٹاف اور رائٹرز کو دن دگنی رات چوگنی ترقی دے‘ اللہ حافظ۔

السلام علیکم! تمام آنچل و حجاب اسٹاف‘قارئین اور آل پاکستان! میرا نام کبریٰ مہتاب ہے (ارے ارے بیٹھ جایئے نام بڑا ہے لیکن خود چھوٹے ہیں ابھی) نام تو کبریٰ ہی ہے اسے تھوڑا اور خوب صورت بنانے کی لیے مہتاب کا اضافہ خودکیا ہے (آہم)۔4 مارچ 1999ء کو منڈی بہائو الدین کے پیارے سے قصبے بوسال سکھا میں پیدا ہوکر حقیقت میں اپنے گھر میں چار چاند مکمل کردیئے۔ ہم چار بہنیں ہیں بھائی نہیں ہے اور اللہ کا شکر ہے بابا جان اور ماموں جان شفقت (اٹلی) نے یہ کمی کبھی محسوس نہیں ہونے دی۔ سب سے چھوٹی ہوں اورسب کی لاڈلی بھی (بابا جان کی کچھ زیادہ ہی لاڈلی ہوں) بابا جان ڈاکٹر ہیں اور امی بہت اچھی سب کا خیال رکھنے والی ہیں اور بہنیں ماشاء اللہ سب پڑھ رہی ہیں۔ سب سے بڑی آپی فریدہ ہیں جس کی حال ہی میں پھوپو کے بیٹے ادریس بھائی (بینکر) سے منگنی ہوئی ہے۔ ادریس بھائی بہت اچھے ہیں‘ اس سے چھوٹی آپی فاخرہ ہے جو کہ ایم اے‘ بی ایڈ اور ساتھ ٹیچنگ بھی کررہی ہیں۔ میں اپنی آپی فاخرہ سے بہت اٹیچ ہوں‘ فیاض بھائی جو کہ آپی فاخرہ کے فیانسی ہیں جس نے ہمیں کبھی بھائی کی کمی محسوس نہیں ہونے دی‘ بہت نائس اور میرے فیورٹ بھیا جانی ہیں۔ میری دونوں آپیوں کی جوڑی چاند‘ سورج کی سی ہے(اللہ نظربد سے بچائے)۔ تیسرے نمبر پر ثناء ہے جو بی اے کی اسٹوڈنٹ ہے اور بہت ذہین ہے اس کے بعد میں ہوں اوہ بہنوں کے جھنجھٹ میں خود کو بھول ہی گئی۔ میں فرسٹ ائر کی اسٹوڈنٹ ہوں ابھی حال ہی میں‘ میں نے خواتین ڈگری کالج میں ایڈمیشن لیا ہے‘ مختلف شوق ہیں خانہ کعبہ دیکھنے کا‘ پوری دنیا دیکھنے کا (دیکھا ابھی لاہور بھی نہیں) ویسے بھائی فیاض نے وعدہ کیا ہوا ہے کہ جب ہم ہنی مون پر جائیں گے تو تمہیں اور ثناء کو ساتھ لے کر جائیں گے (بھیا یاد رکھنا اب)۔ تتلیاں پکڑنے کا شوق‘ قدرتی نظارے قید کرنے کا (آنکھیں سلامت تو خواب بہت)۔ اب چلتے ہیں پسند نا پسند کی طرف کھانے میں چکن بریانی‘ گول گپے‘ ملک شیک اور کیلا ساتھ چٹ پٹی چیزیں پسند ہیں۔ سردیوں میں رات کو آئس کریم کھانا پسند ہے‘ فیورٹ کلر ریڈ اور بلیک ہے۔ فیورٹ ہستی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد بابا جان ہیں۔ فیورٹ رائٹرز میں نمرہ احمد‘ ماہا ملک‘ رفعت سراج‘ نازیہ کنول نازی‘ عشناء کوثر سردار‘ تنزیلہ ریاض اور ہاشم ندیم ہیں۔ فیورٹ شاعر علامہ اقبال‘ اعتبار ساجد‘ قتیل شفائی اور مرزا غالب ہیں۔ فیورٹ ٹیچرز میم رقیب (پرنسپل) مس رخسانہ‘ مس رضیہ‘ مس عذرا‘ مس منور‘ مس شگفتہ ہیں۔ فیورٹ سنگرز عاطف اسلم‘ ارجیت سنگھ‘ امرینہ گل‘ ندیم عباس‘ رحیم شاہ ہیں۔ پسندیدہ کتاب قرآن مجید ہے‘ جیولری میں رسٹ واچ اور چین ہے۔ لباس میں گھیر دار فراک پاجامہ ‘ بڑے سے دوپٹے کے ساتھ‘ لانگ شرٹ ٹرائوزر اور ساڑھی پسند ہے (جو کہ اپنی آپی فاخرہ کی شادی پر پہننے کا ارادہ ہے)۔ سچے اور مخلص لوگ پسند ہیں (اپنے بابا کی طرح)۔ دھوکا دینے والے لوگ بہت برے لگتے ہیں‘ خزاں کا موسم پسند ہے‘ دسمبر کی شامیں اور بارش پسند ہے۔ گفٹ لینا اور دینا دونوں پسند ہیں‘ دوستی کا رشتہ پسند ہے‘ شعر و شاعری سے بہت لگائو ہے۔ صبح کے وقت گھاس پر ننگے پائوں چلنا پسند ہے‘ بزرگوں کی دعائیں اچھی لگتی ہیں۔ جی اب بات ہوجائے خوبیوں‘ خامیوں کی‘ ضدی ہوں‘ سنتی سب کی ہوں کرتی اپنی ہوں۔ غصہ بہت زیادہ آتا ہے غصے میں سخت لفظ بول جاتی ہوں بعد میں پچھتاتی ہوں۔ کسی سے ناراض ہوجائوں تو جلدی راضی نہیں ہوتی (اپنے بابا جان کی طرح)۔ جہاں تک ممکن ہو دوسروں کی مدد کرنے کی کوشش کرتی ہوں‘ دل کی صاف ہوں لوگوں پر بہت جلد اعتبار کرلیتی ہوں‘ نماز کی پابند نہیں جلد باز ہوں۔ بہت سی فرینڈز ہیں فروا رانی‘ رمشاء جانی‘ مقدس‘ ماہ نو‘ خدیجہ عرف کٹو‘ شاہین‘ صباء‘ ثناء ہیں جو کہ سب بچھڑ گئی ہیں۔ یہ تھا میرا مختصر سا تعارف (آہم) آخر میں قارئین کے نام ایک چھوٹا سا پیغام‘ کسی رشتے کو توڑنے سے پہلے ایک بار یہ سوچ لو کہ اب تک اس رشتے کو نبھا کیوں رہے تھے‘ او کے اب اجازت دیجیے اللہ نگہبان۔

Show More

Check Also

Close
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close