Hijaab Jul-16

حمد و نعت

وجد چغتائی/محسن علی

حمد

ذرّہ ہوں آفتاب کی توصیف کیا لکھوں
کرنیں ملیں کرم کی تو حمد و ثنا لکھوں
تیری صفات و ذات میں تفریق ہے عبث
جلوہ لکھوں تجھے کہ میں جلوہ نما لکھوں
واحد کہوں، وحید کہوں، حامد و حمید
تجھ کو حکیم و حاکمِ روز جزا لکھوں
قیوم بھی، قدیم بھی ہے تو عظیم بھی
مطلق لکھوں، صمد لکھوں رب العلیٰ لکھوں
ذروں کو آفتاب کے جلوے عطا کیے
اس سے سوا میں اور کیا تیری عطا لکھوں
عالم نیا ہو روز مرے وجد و حال کا
مضمون تیری حمد کا ہر دم نیا لکھوں

وجد چغتائی

 

نعت

سب سے بڑا دربار مدینے والے کا
نورانی دربار مدینے والے کا
لے کے چلو اب مجھ کو مدینے لے کے چلو
میں تو ہوں بیمار مدینے والے کا
مجھ کو ہوگا ناز کہ جب یہ لوگ کہیں
منگتا ہے سرکار مدینے والے کا
میرے دل کی یہ ہی ایک تمنا ہے
ہو جائے دیدار مدینے والے کا
جو ہیں نبی کے عاشق وہ یہ کہتے ہیں
ہوجائے دیدار مدینے والے کا
جو ہیں نبی کے دشمن وہ یہ کہتے ہیں
اعلیٰ ہے کردار مدینے والے کا
محسن اک دن ہم بھی طیبہ جائیں گے
دیکھیں گے دربار مدینے والے کا

محسن علی

Show More

Check Also

Close
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close