Aanchal Oct-18

حمد و نعت

ابرار اسیر/عبید رضا قادری

حمد
اے خدائے پاک ربِ ذوالجلال
دو جہاں کی نعمتوں سے کر نہال
چاند، سورج، کہکشاں میں تیرا نور
یہ جہانِ رنگ و بو، تیرا جمال
تو نے پیدا کی ہے ساری کائنات
آسمانِ بے ستوں تیرا کمال
زلزلے، سیلاب اور بیماریاں
مجھ کو ان آفات سے یا رب نکال
یاد کرتا ہوں تجھے، دن رات میں
ذکر تیرا ہر گھڑی تیرا خیال
بجلیاں، طوفان اور بادِ سموم
اہلِ عالم کے لیے تیرا جلال
کرلیا ہے مجھ کو دنیا نے اسیر
یا الٰہی اپنی الفت دل میں ڈال

جناب ابرار امیر

نعت رسول مقبولؐ سلی اللہ علیہ وسلم
ملے ہیں خاک سے لیکن بدن میلا نہیں ہوتا
فدایانِ محمدﷺ کا کفن میلا نہیں ہوتا
محبت اہلِ بیت پاک کی جس دل میں پنہاں ہو
سدا شفاف رہتا ہے وہ من میلا نہیں ہوتا
ثنائے مصطفیٰ لکھو کہ ان کی مدح کرنے سے
قلم میلا نہیں ہوتا سخن میلا نہیں ہوتا
نبی کے دین کی خاطر جو بٹتی ہے محبت سے
وہ دولت کم نہیں ہوتی وہ دھن میلا نہیں ہوتا
زباں تو جن کی رہتی ہے ثنائے شاہِ بطحا سے
عبیدِ قادری ان کا دھن میلا نہیں ہوتا

جناب عبید رضا قادری

Show More
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close