Hijaab Nov-18

سحر نو کے قافلے

ندارضوان

علم اور قلم ہی وہ طاقت ہیں جو انقلاب لانے کی صلاحیت رکھتے ہیں خواہ یہ انقلاب فرد کی انفرادی زندگی میں آئے یا معاشرے کی سطح پر رونما ہو۔ ابھی کل کی بات لگتی ہے جب ادارہ آنچل کی جانب سے ایک اور معیاری جریدے حجاب کا آغاز کیا گیا جس کا بنیادی مقصد یہ تھا کہ گھر داری میں مصروف خواتین کی تفریح کے ساتھ ساتھ ذہنی تربیت کا بھی ایسا اہتمام ہو کہ طبع نازک پہ گراں نہ گزرے۔ پروردگار کا احسان عظیم ہے کہ ہماری اس کاوش کو عوامی سطح پر قبولیت کی سند ملی۔
ہمیں بہترین لکھاریوں اور ذہین قارئین کا ساتھ نصیب ہوا جنہوں نے ہماری اس کاوش و محنت میں ہمارا ساتھ دیا۔ ہمیں نہ صرف سراہا بلکہ مزید حوصلہ دیا۔ اس کے ساتھ ساتھ ادارے کے تمام ساتھی بھی قابل تعریف ہیں جن کی شبانہ روز محنت ہر ماہ آپ کے ہاتھوں میں جگمگاتی ہے۔ حجاب نے کامیابی کے تین سال مکمل کرلیے ہیں اور چوتھے سال میں قدم رکھ دیا ہے اس موقع پر ہم نے قارئین کے لیے ایک سروے کا اہتمام کیا ہے جس کے سوالات درج ذیل ہیں۔
۱:۔ حجاب کی کس تحریر کی بدولت آپ کی شخصیت میں مثبت تبدیلی رونما ہوئی۔
۲:۔ حجاب کی تحریروں میں شامل کوئی ایسا کردار جس میں آپ کو اپنی جھلک محسوس ہوئی۔
۳:۔ خواتین کی اکثریت گھریلو موضوعات پر مبنی تحریریں پسند کرتی ہے تو آپ کیا سمجھتی ہیں کہ حجاب کی تحریروں کا کینوس وسیع ہونا چاہیے یا جس ڈگر پر گامزن ہے وہی بہتر ہے۔ کیا آپ تبدیلی کے حق میں ہیں۔
۴:۔ آپ کو حجاب کا کون سا سلسلہ پسند ہے اور کیوں؟
۵:۔ آپ نے حجاب کو دیگر پرچوں سے کس طرح مختلف پایا۔
خ…ز…خ
تبسم بشیر حسین سید خان… ڈنگہ
سب سے پہلے تو حجاب کو اپنی سالگرہ مبارک ہو اور یہ یونہی ترقی کی راہ پر گامزن رہے اور اسے میرے جیسے اچھے قارئین ملتے رہیں (آہم) جوابات شروع کرنے سے پہلے ایک نظم حجاب کے لیے۔
میں نے چاہا تیرے جنم دن پر
ایسا تحفہ تیری نذرکروں
جسے تو پیارے حجاب مدتوں یاد رکھے
پھر ایک لمحے کی سوچ کے بعد میں نے ہاتھ بلند کیے
اور کچھ دعا کے پنچھی آزاد کیے
کہ آنے والے موسموں میں
غم کی گھٹائیں کبھی تیرے قریب نہ آئیں
تیری آنکھوں کے جگنو صدا چمکیں
تیرا دامن ہمیشہ خوشیوں سے بھرا رہے
تو صدا مسکرائے، آمین
ہیپی برتھ ڈے ڈیئر حجاب۔ پورے اسٹاف کا شکریہ جنہوں نے اتنا پیارا ڈائجسٹ پڑھنے کو دیا۔
۱:۔ ہممم… یہ سوال کافی مشکل ہے میرے نزدیک ہر تحریر ایک جیسی ہے۔ جہاں بڑے رائٹرز ہمارے لیے روشنی کا کام کر رہے ہیں وہیں نئے لکھاری بے شک جس کی پہلی تحریر ہے وہ بھی اتنا ہے اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ اس کی صرف تحریر ہی نہیں ہر لفظ نے ہر پیراگراف نے ہر جملے نے سوچ کو ایک نیا رخ دیا ہے۔ مثبت تبدیلی دی ہے چاہے وہ سلسلے ہی کیوں نہ ہو۔ قارئین نے بھی اپنا اہم کردار اد اکیا ہے۔ تحریریں لفظوں سے بنتی ہیں‘ اثر لفظوں میں ہوتا ہے، ہر اس لفظ میں جو مثبت سوچ اور دل سے لکھا گیا ہو۔
۲:۔ ذرا یاد کرنے دیں مجھے… نہیں… آج تک میں نے حجاب تو کیا کئی ڈائجسٹ اور بے شمار تحاریر پڑھی ہیں پر ایک بھی ایسی تحریر نہیں ہے جس میں مجھے اپنی جھلک دکھائی دی ہو جھلک تو کیا لفظ، انداز، عادت کچھ بھی نہیں ہے ایسی تحریر آج تک نہیں لکھی گئی جس میں میری جھلک مجھے دکھائی دی ہو۔
۳:۔ یہ سوال میرا فیورٹ ہے۔ دیکھیں سیدھی بات کہوں گی کہ میں دوسروں سے بالکل منفرد ہوں۔ گھریلو موضوعات پر مبنی اسٹوریز میں سے دو سو فٹ دور بھاگتی ہوں رونا دھونا، سوتیلی ماں، جل ککڑی تائی اف! یہ موضوعات پک گئی ہوں۔موضوع بے شمار ہیں بے شمار، صرف ٹریجڈی نہیں تھوڑی فینسی سی بھی ہونی چاہیے۔ خوابوں کی دنیا جہاں انسان ہر غم فکر سے آزاد ہو، ایسی تحریر جو کچھ دیر کے لیے ہی سہی آس پاس سب سے بے خبر کردے۔ بھلا دے ہر فکر اور بولڈ موضوع بھی ہونا چاہیے۔ دیکھیے آج کل نیٹ اور ٹی وی کی وجہ سے کچھ ڈھکا چھپا تو رہا نہیں ہے اس لیے لکھیے بولڈ موضوع پر بھی‘ تھورا رومانس لکھیے‘ ہلکا پھلکا سا منفرد لکھیے۔ پلیز پیاری رائٹرز سوچیے اس بارے میں‘ بری بات تو ہے نہیں‘ جو دل میں تھا لکھ دیا اگر کسی کو برا لگے تو لگے (سانوں کی ) میں بالکل تبدیلی کے حق میں ہوں۔ آخر بندہ ایک جیسی تحریروں سے بور ہوجاتا ہے تو تبدیلی لازمی ہے۔
۴:۔ حجاب کے تمام سلسلے ہی بہتر ہیں کسی ایک کا نام لینا نا انصافی ہوگی۔ تمام سلسلے ایک سے بڑھ کر ایک ہیں ہاں ’’درجواب آں‘‘ حجاب میں بھی شروع کیا جائے تو کیا ہی بات ہو۔ باقی میں کسی ایک سلسلے کا نام نہیں لے سکتی۔ ایک سلسلہ تھا ’’آغوش مادر‘‘ وہ سلسلہ میرے دل کے بہت نزدیک تھا پر اب تو جیسے ختم ہوگیا ہے۔ ایک ’’رخ سخن‘‘ میں اپنے رائٹرز کو جاننے کو ملتا تھا وہ بھی گیا‘ کیا کہہ سکتے ہیں۔
۵:۔ میں نے حجاب کو ہر طرح سے مختلف پایا ہے۔ آنچل اور حجاب کا تو کوئی جوڑ ہے ہی نہیں نہ ہوسکتا ہے اس کا اسٹاف جتنا پیارا محبت کرنے والا اور اپنے قارئین کا خیال کرنے والا ہے دوسرا کوئی ہو ہی نہیں سکتا۔ ایک اور بات جو مجھے آنچل اور حجاب کی بے حد پسند ہے کہ اس نے ہمیشہ نئے لکھنے والوں کی حوصلہ افزائی کی ہے۔ اس نے کئی نئے نام نکھارے ہیں کتنی ہی شخصیت سنواری ہیں حجاب میں وہ خاصیت ہے کہ جو دوسروں میں نہیں ہے۔ اس نے اپنے چاہنے والوں کو چاہت سے ہی نواز ہے ہمیشہ‘ میں جانتی ہوں کہ میرے سوالات کے جوابات معمولی ہیں لیکن میں نے بہت دل سے رات میں جاگ کر لکھے ہیں ۔ جاتے جاتے ایک بار پھر سے اللہ آنچل و حجاب کو خوب ترقی دے، آمین۔
شازیہ اختر شازی… نور پور
سب سے پہلے تمام لکھنے اور پڑھنے والوں کو شازیہ کی طرف سے ڈھیر سارا پیار اور سلام! ہمارے پیارے حجاب کو بھی بہت بہت سالگرہ مبارک‘ حجاب کی اور میرے پیارے بھانجے محمد حسان کی سالگرہ ایک ہی دن ہوتی ہے حجاب کے لیے ہم ہر سال قرآن پاک کا ختم کراتے ہیں اور حجاب کے لیے بھی دعا کرتے ہیں کہ اللہ اسے اور ترقی اور کامیابی عطا کرے آمین، اب آتے ہیں سروے کی طرف۔
۱:۔ حجاب کی کسی نہیں بلکہ ہر تحریر نے بہت متاثر کیا کبھی کبھی میں اپنے گھر کے کچھ کرائسز کی وجہ سے بہت ٹینشن میں ہوتی تھی تو آنچل اور حجاب کا سہارا لیتی جس کی وجہ سے بہت سی مثبت تبدیلیاں مجھ میں آگئی ہیں۔ میں ان رائٹرز کی شکر گزار ہوں کہ ان کی اتنی اچھی تحریر کی وجہ سے ہمارے دلوں کا بوجھ کافی کم ہوجاتا ہے۔
۲:۔ حجاب کی تحریروں میں بہت سے ایسے کردار تھے جن میں مجھے کافی حد تک اپنی جھلک محسوس ہوتی ہے کسی کا حد سے زیادہ حساس ہونا اور کسی کا دکھ چھپا کر چہرے پر مسکراہٹ رکھنا اور کسی کا سب کا خیال رکھنے کا انداز اور کسی کا حد سے زیادہ برداشت سے کام لینا ایسے بہت سے کردار تھے جن میں واقعی مجھے اپنی جھلک نظر آتی ہے۔
۳:۔ اکثر گھریلو موضوعات پر لکھی تحریریں اس لیے بھی پسند کی جاتی ہیں کیونکہ وہ کافی سبق آموز ہوتی ہیںلیکن کچھ لوگ گھریلو موضوعات کے بجائے طنز و مزاح سے بھرپور تحریریں پسند کرتے ہیں لیکن ہم بس تھوڑی سی تبدیلی چاہتے ہیں کہ ایک موضوع کو بجائے مختلف موضوعات پر تحریریں لکھی جائیں آگے آپ کی مرضی۔
۴:۔ آغوش مادر میرا فیورٹ سلسلہ تھا لیکن پتا نہیں کیوں آپ نے اس سلسلے کو ختم کردیا ہے مجھے اس میں مائوں کے بارے میں پڑھ کر بہت مزہ آتا تھا ابھی تو ہم نے اپنی ماما کے بارے میں لکھنا تھا کیونکہ میری امی بہت بیمار ہیں۔ میں لکھنا چاہتی تھی انہوں نے ہماری خاطر کتنی تکلفییں برداشت کی ہیں میرے لیے تو میری ماں دنیا کی عظیم ماں ہے (ماں تیری عظمت کو سلام) سب قارئین سے درخواست ہے کہ میری ماما کے لیے ڈھیر ساری دعا کریں کہ اللہ ان کو صحت تندرستی والی زندگی نصیب کرے، آمین۔
۵:۔ میں نے کافی چھوٹی عمر سے بچوں کی کہانیاں پڑھنا شروع کی تھیں ٹارزن‘ عمر وعیار‘ عمران سیریز اور بہت سے رسالے پڑھے ہیں پھر ذرا بڑے ہوئے تو آنچل پڑھنا شروع کیا اور پھر آنچل کے ذریعے حجاب ملا اور پھر آنچل اور حجاب کے ہی ہو کر رہ گئے اور پھر حجاب تو حجاب ہے۔ ہمارا اوڑھنا بچھونا حجاب‘ ہمارا کھانا پینا حجاب‘ اس سے اندازہ لگا لیں حجاب کیسا ہوگا۔ آخر میں دعا ہے کہ اللہ حجاب کو دن دگنی رات چوگنی ترقی عطا کرے، آمین۔
تمہاری سالگرہ کے دن یہ دعا ہے ہماری
جتنے ہیں چاند تارے ہو اتنی عمر تمہاری
لیلیٰ رب نواز…ودھیوالی بھکر
۱:۔ کسی ایک تحریر کا نام لینا شاید دوسرے رائٹرز کے ساتھ نا انصافی ہوگی کیونکہ حجاب میں لکھنے والی تمام رائٹرز بہت شاندار لکھتی ہیں جیسے حمیرا قریشی نے جرم محبت لکھا‘ اس میں کتنی ہی لڑکیوں کے لیے سبق پوشیدہ تھا۔ کہنے کو تو تین چار صفحات پر مشتمل وہ ایک اسٹوری تھی لیکن زندگی کے تلخ سبق سے آگاہی تھی۔
۲:۔ شاید ہر ایک کردار میں کیونکہ ہر کردار میں کوئی بات ایسی نظر آتی ہے جیسے ہم میں پائی جاتی ہے۔ ’’میرے خواب زندہ ہیں‘‘ کی زرتاشہ کو دیکھ کر (ہاہاہاہا) ارے دیکھنا ہی تو ہوا جب ہم کوئی اسٹوری پڑھ رہے ہوتے ہیں تو خود کو وہاں موجود پاتے ہیں۔ خیر زرتاشہ کا کردار ایسا ہے جو بالکل ایسا لگتا ہے کہ اپنی جھلک نظر آتی ہے۔
۳:۔ حجاب میں باقی سب پرفیکٹ ہے لیکن ایک تبدیلی ہونی چاہیے اور وہ ہونی چاہیے انٹرویو سنگرز، ایکٹرز، کرکٹرز، رائٹرز اور بہت ساری مشہور شخصیات کے۔
۴:۔ مجھے سلسلہ دوست کا پیغام آئے بہت پسند ہے کیونکہ اس سلسلے کی وجہ سے ہم سب آنچل سے وابستہ سسٹرز ایک دوسرے کو جاننے اور سمجھنے لگی ہیں۔ بہنوں کی محفل اور خاص طور پر اس محفل کا تو مزہ ہی اپنا ہے۔ دل خوش ہوجاتا ہے۔
۵:۔ بات چاہے حجاب کی ہو یا آنچل کی دونوں کی بات ہی الگ ہے باقی تمام پرچوں سے اتنی اپنائیت محسوس نہیں ہوتی جتنی آنچل و حجاب سے‘ تمام سلسلوں سے ایک تعلق قائم ہے‘ دل کا تعلق۔ تمام رائٹرز اتنا اچھا لکھتی ہیں۔ آنچل و حجاب میں بار بار پڑھنے کا دل کرتا ہے۔ آنچل و حجاب نے باندھ رکھا ہے‘ اب رہائی نا ممکن ہے (اور ہمیں چاہیے بھی نہیں)
سحر تبسم سحری… مغل پورہ
حجاب کو سالگرہ بہت بہت مبارک ہو اور یہ ایسے ہی ترقی کرتا رہے، آمین۔
۱:۔ حجاب کی کئی تحریریں ایسی ہیں جس نے مثبت تبدیلی پیدا کی ہے۔ حجاب کی ہر تحریر ہی مثبت اثر ڈالتی ہے بات سوچ کی ہے اگر سنجیدہ تحریر بھی ہو تو ایک سمجھدار قاری اس سے مثبت سوچ ہی لے گا تو کسی ایک کا نام ذہن میں نہیں آرہا۔
۲:۔ مجھے تو پہلے عیشال جہانگیر میں اپنی جھلک نظر آتی تھی لیکن ایسا صرف دو قسطوں تک لگا پھر پتا چلا کہ وہ الگ اور میں الگ ہوں۔
۳:۔ کینوس وسیع ہونا چاہیے‘ بالکل ہونا چاہیے۔ صرف گھریلو ہی نہیں ہرقسم کی تحریر ہونی چاہیے کیونکہ ایک ڈائجسٹ کو مختلف لوگ پڑھتے ہیں اور ہر کسی کی الگ پسند ہوتی ہے تو تبدیلی لانا ضروری ہے۔
۴:۔ مجھے حجاب کا سلسلہ حسن خیال پسند ہے اس میں رائٹرز کو پتا چلتا ہے کہ وہ کہاں تک کامیاب ہوئی ہیں‘ اس لیے یہ میرا فیورٹ سلسلہ ہے اس کے علاوہ ملاقات میرا فیورٹ سلسلہ ہے۔ ہاں البتہ مجھے آرائش حسن سلسلہ پسند نہیں اس کی جگہ کوئی دینی سلسلہ ہونا چاہیے۔
۵:۔ میں نے حجاب کو بہت طریقوں سے مختلف پایا ہے۔ یہ ہر لحاظ سے مختلف ہے اور میرا فیورٹ ڈائجسٹ ہے اور جو پسند ہوتے ہیں ان کی ہر خوبی خامی بھی پسند ہوتی ہے۔ آئی لو یو حجاب اینڈ ہیپی برتھ ڈے۔
ثنا ف فرحان… ملتان
میں کسی بھی ڈائجسٹ کے سروے میں پہلی بار جواب ارسال کر رہی ہوں۔ وجہ یہ نہیں کہ میں ڈرتی تھی کہ ردی کی ٹوکری میں ڈال دیں گے بات یہ ہے کہ میں ازلی سست ہوں اور کام چوری کی بابت تو پوچھیے مت لیکن اس کے باوجود میں پڑھتی بھی ہوں اور کہانیاں پڑھ کر جو مجھے نیند آتی ہے ایمان سے کیا بتائوں، اب بات ہوجائے سروے کے سوالوں کی۔
۱:۔ ویسے تو سب ہی مصنفین بہت با کمال لکھتی ہیں اور بہت سبق آموز بھی وہ چاہے نئی لکھنے والی صبا ایشل، ماورا طلحہٰ، عائشہ تنویر، عمارہ خان ہوں‘ بہت خوب لکھ رہی ہیں‘ یوں سمجھ لیں جیسے قیصر آرا انہیں ہدایت کے ساتھ لکھوا رہی ہیں۔ مجھے حال ہی میں عائشہ پرویز صدیقی کی تحریر پسند آئی اور اس سے ہی مجھ میں تھوڑی بہت مثبت تبدیہلی آئی۔
۲:۔ اگر میں کہوں کہ اب تک کی تمام تر کہانیوں میں مجھے اپنا آپ نظر آیا تو یہ مکھن والی بات ہوجائے گی اور مصنفین سوچیں گی ضرور کہ ان کی کون سی ہیروئن ایسی کاہل تھی ورنہ تو ہیروئن اتنی سگھڑ ہوتی ہے کہ فریج سے کباب بھی برآمد ہوجاتے ہیں اور کچن میں تو نمکو بھی موجود ہوتی ہے بس اسے چائے تیار کرنا ہوتی ہے جبکہ میرا یہ عالم ہے کہ اماں کی دس باتیں سن کر بھی کچن میں نہیں جاتی۔ اگر کبھی غلطی سے چلی بھی جائوں تو واپس نہیں آتی جب تک مہمان چلے نہ جائیں مجھے لالہ رخ کے کردار میں اپنی جھلک نظر آئی ہے کیونکہ میں نے تقریبا پورے ناول میں اس کو صرف ایک سے دوبار کچن کا رخ کرتے دیکھا تھا۔
۳:۔ تبدیلی جب ملک میں آگئی ہے تو پرچے میں بھی آجانی چاہیے۔ ویسے میرے خیال سے ہر طرح کی تحریر ہونی چاہیے تاکہ پڑھنے والوں کو اپنے مزاج کے مطابق مواد ملے۔ محبت کے موضوع کے ساتھ سبق آموز اور مزاح سے بھرپور‘ اس کے علاوہ سنسنی خیز ‘جرائم پر مبنی کہانیوں کو بھی جگہ دینی چاہیے۔
۴:۔ مجھے بزم سخن اور شوخئی تحریر پسند ہے۔
۵:۔ یہ سوال تھوڑا مشکل ہے لیکن جواب تو دینا ہی ہے اب دوسرے پرچوں میں جو تحریر لگتی ہے وہ بھی تقریبا ایسی ہی ہوتی ہیں بلکہ یہ ہی رائٹرز لکھتی ہیں لیکن اس کی بنت الگ ہوتی ہے موضوع بھی منفرد ہوتا ہے۔ حجاب نے ابھی جگہ بنانی ہے اس لیے مصنفین کو اس پہ بھی توجہ دینی چاہیے تب ہی اس میں نکھار کے ساتھ نیا پن بھی آئے گا یہ میرا خیال ہے۔ آخر میں حجاب کو سالگرہ کی ڈھیروں مبارک باد۔
رابی حاکم… گجرات
السلام علیکم حجاب اسٹاف اینڈ قارئین کیسے ہیں آپ سب لوگ یقینا ٹھیک ہی ہوں گے تو جی ہمارے حجاب نے ہم سے سوالات کیے ہیں ان کا جواب دینا تو بنتا ہے نا تو حجاب کی طرف سے پہلے سوال کا جواب یہ ہے کہ۔
۱:۔ اجی کیا بتائیں‘ ابھی تک ایسی تبدیلی رونما نہیں ہوئی جب تبدیلی آئی تو بتائیں گے۔
۲:۔ دوسرا سوال کہ کوئی ایسا کردار جس میں آپ کو اپنی جھلک محسوس ہوئی۔ ابھی ایسا کوئی کردار نہیں ملا جس میں اپنی جھلک محسوس ہوتی ہو یا شاید کسی رائٹر نے ابھی تک ہمارے جیسا کوئی کردار تحریر ہی نہیں کیا۔
۳:۔ گھریلو موضوعات پرتحریریں بھی اچھی ہوتی ہیں مجھے ہر قسم کی تحریریں پسند آجاتی ہیں (وہ کیوں) اس لیے کہ حجاب میں جو شائع ہوتی ہیں۔آنچل و حجاب کی ساری رائٹر بہت اچھا لکھتی ہیں اور حجاب جس ڈگر پر چل رہا ہے وہ بھی اچھا ہے تبدیلی لائیں۔ صفحات کو زیادہ کریں بھئی‘ پہلے سے بھی کم ہوگئے ہیں باقی تمام سلسلے ہی حجاب کے بہت اچھے ہیں۔
۴:۔ مجھے حجاب کا کچن کارنر سلسلہ بہت پسند ہے اس میں ہمیں مزے مزے کی ڈشز جو پکانے کو ملتی ہیں (مگر کبھی بنائی نہیں) شوخئی تحریر اور ٹوٹکے یہ بھی بہت اچھے سلسلے ہیں۔
۵:۔ میں صرف حجاب و آنچل کو ہی پڑھتی ہوں اور یہ بہت ہی اچھے ہیں اور دوسرے پرچے بھی اچھے ہوتے ہوں گے کیونکہ ہر ادارہ اپنے پرچوں پر بہت زیادہ محنت کرتا ہے اور ہر ادارہ یہ بھی چاہتا ہے کہ جو وہ چیز پیش کر رہا ہے وہ مکمل ہونی چاہیے اور اس میں کوئی کمی نہیں ہونی چاہیے تو باقی رسالے بھی بہترین لیکن حجاب میرا پسندیدہ رسالہ ہے اور مجھے بہت پسند ہے۔
کوثرناز… حیدرآباد
دن مہینے اور سال پلک جھپکتے ہی کیسے گزر جاتے ہیں اندازہ ہی نہیں ہوپاتا۔ حجاب کو سالگرہ مبارک ہو ماشاء اللہ سے چوتھے سال میںقدم رکھ دیا ہے۔
یہ واقعی کل ہی کی بات لگتی ہے کہ حجاب کا پہلا شمارہ آیا تھا اور ہم آنچل کی ہم جولی کو ہاتھ میں تھامے بے حد مسرور تھے۔
سو سب سے پہلے حجاب کی ٹیم اور قارئین کو اس پرمسرت موقعے پر دل کی گہرائیوں سے سالگرہ کی بہت ساری مبارکباد پیش کرتے ہیں اور اسی کے ساتھ جوابات کی طرف بڑھتے ہیں۔
۱:۔ ہوش سنبھالا تھا تو آنچل کو اپنے ساتھ پایا تھا اور ساری تبدیلیاں تو بس وہیں سے شروع ہوئی تھیں اس کے بعد تو آنچل اور حجاب کا ساتھ ہمیشہ رہا اور وقتا فوقتا سیکھنے کو بھی ملتا رہا۔
۲:۔ مکمل عکس تو کسی تحریر میں نہیں ہوتا بس ہاں اکثر آپ کی سوچ کچھ جگہوں پر اور کچھ پر الفاظ مل جاتے ہیں۔
۳:۔ میں بالکل تبدیلی کے حق میں ہوں اور بالکل میں چاہتی ہوں کہ گھریلو موضوعات سے نکل کر تھوڑی الگ دنیا میں بھی جایا جائے تاکہ تفریح کا زیادہ سامان میسر آسکے اور اکثر گھریلو کہانیاں بہت روایتی سی ہوتی ہیں سو ان سے باہر نکلنا بہت ضروری ہے۔ میں چاہتی ہوں کہ تحریروں کا کینوس وسیع ہو تاکہ پڑھنے والوں کے اذہان میں بھی مزید وسعت آئے۔
۴:۔ حجاب کا ہر سلسلہ ہی بہت اچھا ہے لیکن حسن خیال مجھے اپنے نام کی بدولت اول روز سے ہی پسند ہے۔
۵:۔ حجاب کیونکہ میرا اپنا رسالہ ہے (اپنا اس طرح سے کہ ایک تو میں فیس بک پیج پر ایڈمن ہوں اور دوسرا یہ کہ آنچل کو شروع سے ساتھ پایا ہے تو آنچل میرا ہے اور اسی طرح حجاب بھی آنچل سے کسی طور مختلف نہیں ہے) اور پھر اپنی چیز تو مختلف ہی ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ جو چیز اسے باقی سب سے ممتاز کرتی ہے وہ نئے لکھاریوں کو موقع دینے کی ہے۔

Show More

Check Also

Close
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close