Aanchal Jul-16

حمد و نعت

بہزادلکھنوی/عبدالستارنیازی

حمد باری تعالیٰ

حمد کرتا ہوں اے خدا تیری
گوکہ دشوار ہے ثناء تیری
تُو حد فکر میں نہیں آتا
حمد کس طرح ہو ادا تیری
پتے پتے میں تیرا عالم ہے
ذرّے ذرّے میں ہے ادا تیری
اے خدا تو ہی رب عالم ہے
ہے سبھوں کے لیے عطا تیری
تُو ہی تُو ہر طرف نمایاں ہے
یاد کیونکر نہ ہو بھلا تیری

حضرت بہزاد لکھنوی…

نعت رسول مقبول صلی اللہ علیہ وسلم

رخ پہ رحمت کا جھومر سجائے کملی والے کی محفل سجی ہے
مجھ کو محسوس یہ ہورہا ہے میرے آقا  کی جلوہ گری ہے
مومنو تم اگر چاہتے ہو زیارت در مصطفیٰؒ کی
دل کی جانب نگاہیںجھکادو سامنے مصطفیٰ کی گلی ہے
وہ سماں کیسا ذیشاں ہوگا جب خدا مصطفیٰ سے کہے گا
اب تو سجدے سے سر کو اٹھا لو آپ کی ساری امت بری ہے
واسطہ سید کربلا کا واسطہ فاطمہؓ کی ردا کا
میری جھولی بھی سرکار بھردو آپ نے سب کی جھولی بھری ہے
مجھ کو فکر شفاعت ہو کیوں کر دو کریموں کا سایہ ہے مجھ پر
ایک طرف رحمتِ مصطفیٰ ہے ایک طرف لطف رب جلی ہے

عبد الستار نیازی

Show More

Check Also

Close
Back to top button
error: Content is protected !!
×
Close